اسرائیلی پارلیمنٹ کے نسل پرستانہ بل کی مذمت

اسرائیلی پارلیمنٹ کے نسل پرستانہ بل کی مذمتمقدس دفاع نیوز ایجنسی کی بین الاقوامی رپورٹر رپورٹ کے مطابق، اسلامی جمہوریہ ایران کی وزارت خارجہ کے ترجمان نے صہیونی پارلیمنٹ کی حالیہ نسل پرستانہ   قرارداد کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ فلسطینی قوم کی استقامت سے صہیونیوں کے غاصبانہ قبضے کا خاتمہ کردیا جائے گا -وزارت خارجہ کے ترجمان بہرام قاسمی نے کہا ہےکہ صہیونی پارلیمنٹ کا نیا قانون بین الاقوامی قوانین کی کھلی خلاف ورزی ہے.

انہوں نے کہا کہ غاصب صہیونی حکمران گزشتہ ستربرسوں سے فلسطینی سرزمین پر ناجائز قبضہ کئے ہوئے ہیں اور مظلوم فلسطینی عوام کا قتل عام کرنےکے ساتھ ساتھ نسل پرستی و تعصب کی بنیاد پر کالے قوانین بھی بنارہے ہیں.

ترجمان وزارت خارجہ نے کہا کہ امریکہ کی جانب سے صہیونیوں کی کھلی حمایت جاری ہے جبکہ امریکی سفارتخانے کی بیت المقدس منتقلی اور بعض عرب ممالک کی صہیونیوں کے ساتھ تعلقات کی بحالی کی کوششوں سے خطے میں امن و استحکام کو شدید نقصان پہنچ رہا ہے-

انہوں نے مزید کہا کہ فلسطینی قوم صہیونیوں کی نسل پرستی کے خلاف جد و جہد جاری رکھے گی اور یقینا فلسطینیوں کی استقامت سے ہی غاصبوں کو فلسطینی سرزمین سے نکال باہر کیا جائے گا. وزارت خارجہ کے ترجمان کا کہنا تھا کہ مقبوضہ فلسطین میں صہیونیوں کے نسل پرستانہ نظام کا دور ختم ہوچکا ہے اور جلد دنیا کی حریت پسند اقوام، مسلم اقوام بالخصوص فلسطینیوں کی جد و جہد سے صہیونیوں کی سازشوں کو ناکام بنادیا جائے گا.-

یاد رہے کہ صہیونی پارلیمنٹ نے گزشتہ روز اسرائیل کو "صہیونی ریاست" قرار دینے کا نسل پرستانہ بل منظور کرلیا جس کے تحت صرف یہودیوں کوہی ملک میں خودمختاری کا حق ہوگا اور فلسطینیوں کو ان کے سبھی شہری حقوق سے محروم کردیا جائے گا  بل کے خلاف پارلیمنٹ میں زبردست ہنگامہ آرائی ہوئی اور پرچیاں پھاڑی گئیں جبکہ اس نسل پرستانہ بل کی منظوری پر جگہ جگہ احتجاج بھی کیا جارہاہے۔

اسرائیلی پارلیمنٹ میں عرب ارکان  نے بھی اس بل سخت احتجاج کیا اور جمہوریت کا قتل بتایا

پیغام کا اختتام/