اپ ڈیٹ: 14 June 2021 - 16:44
ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ ابھی تک ہم نے جنوبی کوریا کی جانب سے مسدود شدہ ایرانی کرنسی کی رہائی کے لئے کوئی عملی اقدام نہیں دیکھا ہے۔
خبر کا کوڈ: ۴۳۴۶
تاریخ اشاعت: 13:13 - March 08, 2021

ابھی تک کوریا میں ایرانی وسائل کو آزاد کرنے کیلئے کوئی عملی اقدام نہیں دیکھایا گیا ہےمقدس دفاع نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق یہ بات "سعید خطیب زادہ" نے پیر کے روز اپنی ہفتہ وار پریس کانفرنس کے دوران صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے کہا کہ ہم سیول کے منتظر ہیں کہ جنوبی کوریا میں ایرانی بلاک شدہ رقم جاری کریں۔
خطیب زادہ نے سابق برطانوی سکریٹری خارجہ جریمی ہانٹ کے نازنین زاغری کی رہائی پر بیانات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جیریمی ہنٹ کے منافقانہ بیانات آج کچھ سال قبل ان کی تباہ کن حرکتوں کا احاطہ نہیں کرتے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ برطانوی حکومت کو یہ بھی یاد رکھنا چاہئے کہ ایرانیوں کے کیسز جو بغیر کسی وجہ سے برطانیہ میں گرفتار ہوئے اور انسانی حقوق کی خلاف ورزی کے الزام میں بغیر کسی قید میں بند تھے ، ایران میں اب بھی کھلے ہوئے ہیں اور ہم اس کی پیروی کر رہے ہیں۔
انہوں نے آئرش وزیر خارجہ کے تہران کے دورے کے بعد جوہری معاہدے میں یورپ کے وعدوں پر عمل درآمد پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ہم اس کے کوآرڈینیٹر کے ذریعہ یورپ کی کوششوں کو مثبت ارادوں سے دیکھتے ہیں لیکن انہوں نے اپنی ذمہ داریوں کو نہیں نبھایا ۔
انہوں نے یمنی جنگ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یمن میں بحران کی جڑ وہ جنگ ہے جس پر سعودی ولی عہد شہزادہ کا خیال تھا کہ یمنی عوام کے قتل سے تین ہفتوں کا خاتمہ ہوگا، یمنی عوام چھ سالوں سے یوروپی اور امریکی بموں کے ساتھ ساتھ سعودی عرب کے جدید اسلحہ کے خلاف بھی مزاحمت کر رہے ہیں۔

آپ کا تبصرہ
نام:
ایمیل:
* رایے:
مقبول خبریں