اپ ڈیٹ: 11 November 2019 - 13:28
اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر نے کہا ہے کہ امریکی صدر ٹرمپ کی جانب سے ایران کو مذاکرات کی پیشکش کا مقصد در اصل ایرانی قوم کے خلاف نفسیاتی جنگ شروع کرنا اور امریکی کانگریس کے انتخابات سے فائدہ حاصل کرنا ہے۔
خبر کا کوڈ: ۲۱۴۰
تاریخ اشاعت: 23:30 - August 07, 2018

ٹرمپ کا مقصد ایران میں نفسیاتی جنگ شروع کرنا ہے: صدر روحانیمقدس دفاع نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر حسن روحانی نے پیر کی رات  براہ راست ٹی وی انٹرویو میں کہا کہ ٹرمپ کا مخاطب ایرانی عوام نہیں کیونکہ وہ عالمی جوہری معاہدے سے علیحدہ ہوگیا اوراس کا مقصد ایرانی عوام کے درمیان نفسیاتی جنگ شروع کرنا ہے۔

ایران کے صدر نے کہا کہ پابندیوں کے ساتھ ایک ہی وقت میں مذاکرات کی تجویز بے معنی ہے اور آج وہ شخص مذاکرات کا دعوی کررہا ہے کہ اس نے خود مذاکرات کی میز کو چھوڑ دیا ہے۔

صدر مملکت نے اس جانب اشارہ کرتے ہوئے کہ جوہری معاہدے سے امریکہ کے نکلنے کے بعد امریکہ مشکلات سے دوچار ہوا کہا کہ ٹرمپ نے ایران کو مذاکرات کی پیشکش سے اپنی ساکھ کو بہتر کرنے کی کوشش کرنے کے ساتھ ساتھ اپنے آپ کو ایرانی قوم کے دوست کے طور پر پیش کرنے کی کوشش کی۔

صدر حسن روحانی نے ایرانی قوم کی جانب سے امریکی حکام کے متضاد اقدامات اور بیانات کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ 40 سال کے تجربے نے دکھا دیا کہ امریکی حکام، ایرانی قوم کو نقصان پہنچانے کے ہر موقع سے فائدہ اٹھاتے ہیں۔

صدرمملکت نے کہا کہ جو بھی مذاکرات میں دلچسپی رکھتا ہے اسے  جان لیناچاہئیے کہ مذاکرات کیلئے صداقت ضروری ہے لیکن ہمارے مد مقابل وہ ہے جو کسی بھی عالمی معاہدے کی پاسداری نہیں کرتا جس کی مثال پیرس کا تجارتی معاہدہ اور جوہری معاہدہ ہے جس سے امریکہ علیجدہ ہوا اور اس قسم کے شخص کے ساتھ مذاکرات فضول ہیں۔

ایران کے صدر نے  تہران کے خلاف امریکہ کے ظالمانہ اور غیر قانونی نئی پابندیوں سے مقابلہ کرنے کیلئے ایرانی حکومت کی پالیسی کی تشریح کرتے ہوئے ایرانی قوم کو یقین دلایا کہ ایران کی حکومت، عدلیہ ، پارلیمنٹ اور ایرانی قوم کے ساتھ اقتصادی مسائل و مشکلات پر قابو پانے کے ساتھ ساتھ امریکی پابندیوں کو ناکام بنا دے گی۔

 
 
آپ کا تبصرہ
نام:
ایمیل:
* رایے:
مقبول خبریں